Webhosting in Pakistan
Results 1 to 11 of 11

Thread: Namaz-e-Taraweeh aik masnoon amal

  1. #1
    Niqash's Avatar
    Niqash is offline Senior Member+
    Last Online
    8th February 2014 @ 07:15 PM
    Join Date
    30 Jun 2008
    Posts
    4,568
    Threads
    160
    Credits
    0
    Thanked
    4

    Arrow Namaz-e-Taraweeh aik masnoon amal

    Webhosting in Pakistan
    Attached Images Attached Images     

  2. #2
    Join Date
    23 Oct 2006
    Location
    Lalamusa
    Age
    34
    Posts
    7,054
    Threads
    198
    Credits
    0
    Thanked
    9

    Default

    JAZAAK ALLAH..bohat achi sharing hai

  3. #3
    naseer313 is offline Junior Member
    Last Online
    10th October 2008 @ 12:43 PM
    Join Date
    27 Aug 2008
    Age
    50
    Posts
    22
    Threads
    0
    Credits
    760
    Thanked
    0

    Default Taraweeh tarak karne waaloen ka bura anjaam



    Jinhoen nay taraweeh ke sunnath hone ko na maana, unka haal eh hai ke unke haan quraan ke haafiz naheen hain. Ab hum sunnion mein bhi ek jamaath iske sunnat hone ko inkaar kar rahee hai, aur unmein huffaaz ki kamee hoti jaa rahi hai.

  4. #4
    Doctor is offline Senior Member+
    Last Online
    13th September 2009 @ 09:57 AM
    Join Date
    26 Sep 2006
    Location
    Alkamuniya
    Age
    48
    Posts
    21,458
    Threads
    1525
    Credits
    760
    Thanked
    36

    Default


    ماشا اللہ، سبحان اللہ

    آپ نے بہت عمدہ اور بہترین باتیں پیش کی ہیں
    اللہ پاک ہمیں دین کی صحیح سمجھ اور عمل کی توفیق عطاء فرمائے آمین
    آپ کا بہت بہت شکریہ

  5. #5
    rehanking is offline Senior Member+
    Last Online
    11th June 2014 @ 04:59 PM
    Join Date
    27 Apr 2009
    Age
    50
    Posts
    37
    Threads
    1
    Credits
    760
    Thanked: 1

    Default

    Very informative

  6. #6
    saqib rashid is offline Senior Member+
    Last Online
    21st February 2019 @ 02:38 PM
    Join Date
    08 Dec 2010
    Age
    29
    Gender
    Male
    Posts
    198
    Threads
    1
    Credits
    929
    Thanked
    11

    Default

    nice sharing

  7. #7
    farhanleos's Avatar
    farhanleos is offline Senior Member
    Last Online
    5th October 2017 @ 04:37 PM
    Join Date
    15 Aug 2008
    Location
    Damam KSA
    Gender
    Male
    Posts
    1,050
    Threads
    98
    Credits
    805
    Thanked
    102

    Default

    mashaAllah zabar dast

  8. #8
    Fiza15 is offline Member
    Last Online
    27th August 2011 @ 04:16 PM
    Join Date
    07 Jun 2011
    Location
    Islamabad
    Gender
    Female
    Posts
    835
    Threads
    211
    Thanked
    49

    Default

    JazakALLAH buhat khoobsurat sharing ....

  9. #9
    umer_amir is offline Member
    Last Online
    23rd January 2013 @ 09:00 PM
    Join Date
    28 Nov 2010
    Location
    RAWALPINDI
    Gender
    Male
    Posts
    2,523
    Threads
    172
    Thanked
    163

    Default

    JAZAAK ALLAH..bohat achi sharing hai

  10. #10
    Reehab is offline Advance Member
    Last Online
    12th November 2018 @ 06:28 PM
    Join Date
    29 May 2009
    Location
    Dammam
    Gender
    Male
    Posts
    2,448
    Threads
    40
    Credits
    910
    Thanked
    449

    Default

    تـراويح كا مســـئله



    تـراويح لغت میں الترويحة کی جمع ہے اوریہ استراحت سے ہے کیونکہ رمضان میں ہرچار ركعات کے بعد تهوڑی دیر استراحت وآرام کرتے ہیں اور حديث میں اس کو صلاة التراويح کہا گیا ہے کیونکہ لوگ ہر دو سلاموں کے بعد استراحت وآرام کرتے ہیں اور یاد رہے کہ عربی لغت میں جمع کم ازکم تین ( 3 ) سے شروع ہوتی ہے یعنی جمع کے کم ازکم تین افراد ہوتے ہیں زیاده جتنے بهی ہوں لہذا تین ( 3 ) سے پہلے جمع شروع نہیں ہوتی

    لغت عرب کے مشہور ومستند عالم علامہ ابن منظور رحمه الله اپنی کتاب لسان العرب میں یہی تصریح فرماتے ہیں
    والتراويح في اللغة: جمع الترويحة يقول ابن منظور: التَّرْويحةُ فـي شهر رمضان: سميِّت بذلك لاستراحة القوم بعد كل أَربع ركعات وفـي الـحديث: صلاة التراويح لأَنهم كانوا يستريحون بـين كل تسلـيمتـين والتراويح جمع تَرْوِيحة، وهي الـمرة الواحدة من الراحة تَفْعِيلة منها مثل تسلـيمة من السَّلام
    لسان العرب، لابن منظور، ج2 ص462



    تـراويح کی اس لغوی تعریف سے ہی یہ بات واضح ہوگئ کہ تـراويح کی تعداد آٹهہ ( 8 ) سے زیاده ہے کیونکہ چار رکعات کے بعد ایک ترویحه ، آٹهہ رکعات کے بعد دوسرا ترویحه ، اور باره رکعات کے بعد تیسرا ترویحه ، لہذا باره رکعات سے کم پر لغت عرب کی رو سے تراویح کا اطلاق نہیں ہوسکتا ، لہذا آٹهہ رکعات کو لازم کہنے والوں کی صریح غلطی تـراويح کی اس لغوی تعریف سے ہی ثابت و واضح ہوگئ





    بیس رکعات تراویح سنت ہے


    تراویح کا مسئلہ قرآن مجید میں موجود نہیں ہے بلکہ کتب احادیث میں موجود ہے اور کتب احادیث میں رسول الله صلى الله عليه وسلم کا تین رات تراویح پڑهنے اورامت کو تراویح پڑهنے کی ترغیب موجود ہے مثلا محدثین کرام نے اپنی کتب میں تراویح کے بارے اس طرح ابواب قائم کیئے ہیں



    1 = باب فضل من قام رمضان ، صحيح البخاري
    2 = باب الترغيب في قيام رمضان وهو التراويح ، شرح النووي على مسلم
    3 = باب ما جاء في قيام رمضان ، موطأ مالك
    4 = باب ما جاء في قيام شهر رمضان ، سنن الترمذي
    5 = باب ما جاء في قيام شهر رمضان ، سنن ابن ماجه
    6 = باب قيام شهر رمضان ، سنن النسائي
    7 = باب في قيام شهر رمضان ، سنن أبي داود
    وغیرذالک
    ان ابواب کے تحت ان محدثین کرام نے جو احادیث نقل کی ہیں ان میں مندرجہ ذیل باتوں کی تصریح ہے


    1 = رسول الله صلى الله عليه وسلم نے رمضان المبارک کا پورا مہینہ تراویح نہیں پڑهائ
    2 = رسول الله صلى الله عليه وسلم نے رمضان المبارک کی تیئیسویں کی رات کو تیسرے حصہ تک ، پچسویں کی رات کو نصف حصہ تک ، اور ستائیسویں کی رات کو آخرتک تراویح پڑهائ
    3 = ان تین راتوں میں تراویح پڑهانے کے بعد اور وتر پڑهنے پہلے رسول الله صلى الله عليه وسلم کا سونا ثابت نہیں ہے
    4 = رسول الله صلى الله عليه وسلم نے چوتهی رات کو صحابہ کرام رضی الله عنهم کو ارشاد فرمایا کہ اب اپنے اپنے گهروں میں تراویح پڑهہ لیا کریں
    5 = رسول الله صلى الله عليه وسلم کی رحلت تک یہی حالت رہی اور حضرت سيدنا ابوبکر صدیق رضی الله عنه کی دور خلافت میں بهی یہی حالت رہی اور سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه کی دور خلافت کے شروع میں بهی یہی حالت رہی
    6 = پهر سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه نے اپنے دور خلافت میں تمام لوگوں کو سیدُ القراء حضرت أبي بن كعب رضي الله عنه کی امامت میں بیس رکعات تراویح پر جمع کیا اور رسول الله صلى الله عليه وسلم اس ارشاد مبارک عليكم بسنتى وسنة الخلفاء الراشدين المهديين عضوا عليها بالنواجذ ، أخرجه أبو داود والترمذي وإبن ماجة وأحمد وإبن حبان والحاكم ، کے مطابق سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه کا یہ اقدام سنت ہے اسی لیئے تمام صحابہ کرام رضی الله عنهم کا اس پر اجماع واتفاق ہوا


    یاد رہے کہ محدثین کرام نے تراویح کے بارے جو ابواب قائم کیئے ہیں ان میں رسول الله صلى الله عليه وسلم کی تراویح کی کوئ صحیح متعین تعداد ثابت نہیں ہوتی کہ رسول الله صلى الله عليه وسلم نے کتنی رکعات تراویح پڑهائ ؟ لہذا اس صورت حال میں ایک دین دار مسلمان صحابہ کرام رضی الله عنهم کی طرف رجوع کرے گا انهی مقدس شخصیات کے قول وعمل کو دیکهے گا کیونکہ قرآن وسنت اور سارا دین ہماری طرف انهی نفوس قدسیہ کے واسطہ سے پہنچا ہے یہی وه مقدس ومطهر جماعت ہے جنهوں نے اپنی ساری عمریں رسول الله صلى الله عليه وسلم کی خدمت اقدس میں گذاریں اور یہی مقدس ومحترم شخصیات رسول الله صلى الله عليه وسلم کے اقوال واعمال واطوار وعادات ورموز ونکات واحکامات وارشادات وفرمودات کو باقی امت میں سب سے زیاده اوربہتر وکامل طور پرجاننے والے اوراس پرعمل کرنے والے تهے لہذا تراویح کے باب میں ہم انهی مقدس ومحترم شخصیات کی طرف رجوع کریں گے لہذا اس باب میں جب ہم صحابہ کرام رضی الله عنهم کے عمل وسیرت کو دیکهتے ہیں تو واضح طور ہمیں صحابہ کرام رضی الله عنهم کا یہ عمل نظرآتا ہے کہ سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه نے اپنے دور خلافت میں تمام لوگوں کو سیدُ القراء حضرت أبي بن كعب رضي الله عنه کی امامت میں بیس رکعات تراویح پر جمع کیا جیسا کہ صحيح البخاري وغیره میں یہ تصریح موجود ہے
    وعن ابن شهاب عن عروة بن الزبير عن عبد الرحمن بن عبد القاري أنه قال خرجت مع عمر بن الخطاب رضي الله عنه ليلة في رمضان إلى المسجد فإذا الناس أوزاع متفرقون يصلي الرجل لنفسه ويصلي الرجل فيصلي بصلاته الرهط فقال عمرإني أرى لو جمعت هؤلاء على قارئ واحد لكان أمثل ثم عزم فجمعهم على أبي بن كعب الخ فتح الباري بشرح صحيح البخاري
    اور کسی بهی شخص نے ان پر کوئ انکار واعتراض نہیں کیا اور بهلا اعتراض کون کرتا آخر بیس رکعات تراویح کا حکم دینے والی شخصیت کون ہے ؟ وه سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه ہیں جن کے بارے میں رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا الله تعالی نے عمر کے دل اور زبان پر حق کو جاری کردیا ہے ، إن الله جعل الحق على لسان عمر وقلبه ، سنن الترمذي ورواه أحمد والبزار والطبراني في الأوسط ورجال البزار رجال الصحيح غير الجهم ابن أبي الجهم وهو ثقة.، وه عمر رضي الله عنه جن کو دنیا میں جنت کی خوشخبری زبان نبوت سے مل چکی تهی أخرج أحمد بن حنبل في مسنده عن سعيد بن زيد أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال: " أبو بكر في الجنة، وعمر في الجنة، وعثمان في الجنة، وعلي في الجنة، وطلحة في الجنة، والزبير في الجنة، وعبد الرحمن بن عوف في الجنة، وسعد بن أبي وقاص في الجنة، وسعيد بن زيد في الجنة، وأبو عبيدة بن الجراح في الجنة ، وه عمر رضي الله عنه جن کی رائے اور فیصلہ کے موافق ربُ العالمین قرآن نازل کرتے ہیں ،اورتقریبا بیس مقامات سے زائد میں سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه کی رائے عالی کے موافق قرآن نازل ہوا ، وقد فصل الامام السيوطي في بيان موافقات الوحي لكلام عمر رضی الله عنه ، انظر تاريخُ الخلفاء وه عمر رضي الله عنه جن کے بارے میں رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا اے ابن الخطاب الله کی قسم جس کے قبضہ میں میری جان ہے جس راستہ سے تو گذرتا ہے شیطان وه راستہ چهوڑ دیتا ہے ، يا ابن الخطاب والذي نفسي بيده ما لقيك الشيطان سالكا فجا قط إلا سلك فجا غيرفجك ، رواه البخاري وغيره ، وه عمر رضي الله عنه جن کی زبان مبارک پر سکینہ نازل ہوتا تها ، وعن ابن مسعود قال: ما كنا نبعد أن السكينة تنطق على لسان عمر. رواه الطبراني وإسناده حسن، وعن طارق بن شهاب قال: كنا نتحدث أن السكينة تنزل على لسان عمر. رواه الطبراني ورجاله ثقات وه عمر رضي الله عنه جن کو رسول الله صلى الله عليه وسلم نے اس امت میں سب سے بہتر قراردیا عن علي رضي الله عنه أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال: خير هذه الأمة بعد نبيها أبو بكر وعمر ، أخرجه أحمد في مسنده ، وه عمر رضي الله عنه جن کو رسول الله صلى الله عليه وسلم نے الله تعالی سےدعاء کرکے مانگا ، اللهم أعز الإسلام بعمر بن الخطاب خاصة " أخرجه الحاكم عن ابن عباس وأخرجه الطبراني في الأوسط من حديث أبي بكر الصديق وفي الكبير من حديث ثوبان ، وه عمر رضي الله عنه جن کے اسلام کی خوشخبری سیدنا جبریل علیه السلام آسمان والوں کی طرف سے رسول الله صلى الله عليه وسلم کے پاس لائے عن ابن عباس ، قال : لما أسلم عمر أتى جبريل النبي صلى الله عليه وسلم فقال : لقد استبشر أهل السماء بإسلام عمر ، أخرجه ابن ماجة ، وه عمر رضي الله عنه جن کے بارے رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا اگرمیرے بعد کوئ نبی ہوتا تو وه عمر بن الخطاب ہوتے ، عن عقبة بن عامر قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم : " لو كان بعدي نبي لكان عمر بن الخطاب ، أخرجه الترمذي والحاكم وصححه ، وه عمر رضي الله عنه جن کے بارے رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا کہ میں شياطين الجن والإنس کو دیکهتا ہوں سب عمر سے بهاگ گئے ، وه عمر رضي الله عنه جن کے بارے رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا کہ شیطان بهی عمر سے ڈرتا ہے عن عائشة رضي الله عنها أن النبي صلى الله عليه وآله وسلم قال: إن الشيطان يفرق ( يخاف ) من عمر ، أخرجه ابن عساكر وه عمر رضي الله عنه جن کے بارے رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا کہ میرے بعد حق عمر کے ساتهہ ہے جہاں بهی وه ہو ، عن الفضل بن العباس قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم : الحق بعدي مع عمر حيث كان ، أخرجه الطبراني والديلمي ، وه عمر رضي الله عنه جن کے بارے رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا کہ جس نے عمر سے نفرت کی اس نے مجهہ سے نفرت کی اورجس نے عمر سے محبت کی اس نے مجهہ سے محبت کی ، عن أبي سعيد الخدري قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم : من أبغض عمر فقد أبغضني ومن أحب عمر فقد أحبني . .. أخرجه الطبراني في الأوسط إسناده حسن ، وه عمر رضي الله عنه جن کو زبان نبوت سے الفارُوق کا لقب ملا یعنی حق وباطل میں فرق کرنے والا ، الخ


    حاصل یہ کہ سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه کے فضائل ومناقب بے شمار ہیں چند فضائل میں نے مختصرا ذکر کردیئے کیونکہ تراویح کے باب میں ہمارے اس زمانہ کے کچهہ جاہل ومجهول لوگ سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه کے حق میں نازیبا کلمات تک کہ دیتے ہیں اور کچهہ جاہل لوگ تو اتنی جراءت کرتے ہیں کہ برملا یہ کہ دیتے ہیں کہ ہم تو نبی کی سنت پرعمل کرتے ہیں بدعت عمری پر عمل نہیں کرتے ( معاذ الله ثم معاذ الله ) لہذا ایک دین دار مسلمان خود یہ فیصلہ کرلے کہ وه تراویح کے بارے میں سيدنا عمر بن الخطاب رضي الله عنه کی اتباع کرے گا یا آج کل کے چند جاہل لوگوں کی ؟؟
    کیا نبی صلى الله عليه وسلم کی سنت کو سيدنا عمر رضي الله عنه اوردیگر صحابه کرام زیاده جانتے تهے یا آج کل کے چند جاهل لوگ ؟؟ وه لوگ جو سيدنا عمر رضي الله عنه کے اس اقدام کو سنت نہیں سمجهتے اوراپنے زعم میں صرف آٹهہ رکعات کو نبی کی سنت سمجهتے ہیں تو پهر ایسے لوگ رمضان میں پورا مہینہ جماعت کے ساتهہ ایک امام کے پیچهے تراویح کیوں پڑهتے ہیں کیونکہ رسول الله صلى الله عليه وسلم نے رمضان المبارک کا پورا مہینہ تراویح نہیں پڑهائ ؟؟
    وه لوگ جو سيدنا عمر رضي الله عنه کے اس اقدام کو سنت نہیں سمجهتے تو پهر ایسے لوگ رمضان میں پورا مہینہ جماعت کے ساتهہ مسجد میں کیوں تراویح پڑهتے ہیں جب کہ رسول الله صلى الله عليه وسلم نے تو تین رات مسجد میں تراویح پڑهانے کے بعد ارشاد فرمایا تها اب تم اپنے گهروں میں نماز( تراویح ) پڑهو مجهے ڈر ہے کہ کہیں تم پر تراویح کی نماز فرض نہ ہوجائے الخ ؟؟ خشيت أن تفرض عليكم فلا تطيقوها ، وقال : صلوا في بيوتكم ، فإن أفضل صلاة المرء في بيته إلا المكتوبة


    الله تعالی ہمیں رسول الله صلى الله عليه وسلم کامل اتباع نصیب کرے اورایسی اتباع جس کا کامل نمونہ صحابه کرام نے پیش کیا ہے

  11. The Following 2 Users Say Thank You to Reehab For This Useful Post:

    ismatzulfi (13th July 2011), speedyboy3 (13th July 2011)

  12. #11
    waqasahmad1's Avatar
    waqasahmad1 is offline Advance Member
    Last Online
    12th June 2019 @ 04:48 PM
    Join Date
    27 Nov 2010
    Location
    Lahore
    Gender
    Male
    Posts
    8,021
    Threads
    280
    Credits
    60
    Thanked
    599

    Default

    Webhosting in Pakistan
    JAZAAK ALLAH..bohat achi sharing

Similar Threads

  1. Namaz Taraweeh ki Fazeelat
    By Waqar-786 in forum Sunnat aur Hadees
    Replies: 4
    Last Post: 10th August 2013, 07:43 PM
  2. Bulandi pay janay aur nechay aanay ka masnoon amal
    By Shaukat Hayat in forum Sunnat aur Hadees
    Replies: 1
    Last Post: 22nd June 2009, 02:00 PM
  3. Masnoon Namaz
    By babaphone in forum Ibadat
    Replies: 0
    Last Post: 30th October 2008, 04:53 AM

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •