Webhosting in Pakistan
Results 1 to 5 of 5

Thread: علم تجوید اور اس کی اہمیت

  1. #1
    maktabweb is offline Advance Member
    Last Online
    22nd July 2019 @ 02:16 PM
    Join Date
    19 Sep 2015
    Location
    Karachi
    Age
    56
    Gender
    Male
    Posts
    1,741
    Threads
    812
    Credits
    17,329
    Thanked
    238

    Default علم تجوید اور اس کی اہمیت

    Webhosting in Pakistan
    السلام علیکم


    تجوید کے معنیٰ ہیں بہتر اور خوبصورت بنانا۔

    تجوید اس علم کا نام ہے جس سے قرآن مجید کے الفاظ اور حروف کی بہتر سے بہتر ادائیگی اور آیات و کلمات پر وقف کے حالات معلوم ہوتے ہیں۔

    اس علم کی سب سے زیادہ اہمیت یہ ہے کہ دنیا کی ہر زبان اپنی خصوصیات میں ایک خصوصیت یہ بھی رکھتی ہے کہ اس کا طرز ادا لہجہٴ بیان دوسرى زبانوں سے مختلف ہو تا ہے اور یہی لہجہ اس زبان کی شیرینی، چاشنی اور اسکی لطافت کا پتہ دیتا ہے۔

    جب تک لہجہ و انداز باقی رہتا ہے زبان دلچسپ اور شیرین معلوم ہوتی ہے، اور جب وہ لہجہٴ ادا بدل جاتا ہے تو زبان کا حسب ختم ہو جاتا ہے۔ ضرورت ہے کہ کسی زبان کو سیکھتے وقت اور اس میں تکلم کا کرتے وقت اس بات کا لحاظ رکھا جائے کہ اس کے الفاظ اس شان سے ادا ہوں جس انداز سے اہل زبان ادا کرتے ہیں اور اس میں حتی الامکان وہ لہجہ باقی رکھا جائے جو اہل زبان کا لہجہ ہے اس لئے بغیر تجوید، زبان تو وہی رہے گی لیکن اہل زبان اسے زبان کی بربادی ہی کہیں گے۔

    اردو زبان میں بے شمار الفاظ ہیں جن میں ت اور د کی لفظ آتی ہے اور انگریزى زبان میں ایسا کوئی لفظ نہیں ہے۔ انگریزى بولنے والا جب اردو کے ایسے لفظ کو استعمال کرتا ہے توتم کے بجائے ٹم اور دین کے بجاے ڈین کہتا ہے جو کسی طرح بھی اردو کہے جانے کے لائق نہیں ہے۔

    یہی حال عربی زبان کا بھی ہے کہ اس میں بھی الفاظ و حروف کے علاوہ تلفظ و ادا کو بھی بے حد دخل ہے اور زبان کی لطافت کا زیادہ حصہ اسی ایک بات سے وابستہ ہے اس کے سیکھنے والے کا فرض ہے کہ ان تمام آداب پر نظر رکھے جو اہل زبان نے اپنی زبان کے لئے مقرر کئے ہیں اور ان کے بغیر تکلم اور ان کے بغیر تکلم کرکے وہ دوسرے کی زبان کا ستیاناس نہ کرے۔

  2. #2
    Net_master is offline Member
    Last Online
    18th May 2019 @ 07:28 PM
    Join Date
    20 Mar 2015
    Location
    Pindi bhattian
    Age
    23
    Gender
    Male
    Posts
    661
    Threads
    62
    Thanked
    18

    Default

    جَزَاكَ اللهُ خَیْرًا

    Sent from my QMobile i2 using Tapatalk

  3. #3
    esraahmed is offline Member
    Last Online
    7th May 2019 @ 10:09 PM
    Join Date
    15 Apr 2019
    Age
    25
    Gender
    Female
    Posts
    53
    Threads
    0
    Credits
    297
    Thanked
    0

    Default

    Jazakallah!

  4. #4
    waqasshahid's Avatar
    waqasshahid is offline Senior Member+
    Last Online
    8th August 2019 @ 06:49 PM
    Join Date
    24 Jan 2014
    Gender
    Male
    Posts
    331
    Threads
    48
    Credits
    2,503
    Thanked
    43

    Default

    Quote maktabweb said: View Post
    السلام علیکم


    تجوید کے معنیٰ ہیں بہتر اور خوبصورت بنانا۔

    تجوید اس علم کا نام ہے جس سے قرآن مجید کے الفاظ اور حروف کی بہتر سے بہتر ادائیگی اور آیات و کلمات پر وقف کے حالات معلوم ہوتے ہیں۔

    اس علم کی سب سے زیادہ اہمیت یہ ہے کہ دنیا کی ہر زبان اپنی خصوصیات میں ایک خصوصیت یہ بھی رکھتی ہے کہ اس کا طرز ادا لہجہٴ بیان دوسرى زبانوں سے مختلف ہو تا ہے اور یہی لہجہ اس زبان کی شیرینی، چاشنی اور اسکی لطافت کا پتہ دیتا ہے۔

    جب تک لہجہ و انداز باقی رہتا ہے زبان دلچسپ اور شیرین معلوم ہوتی ہے، اور جب وہ لہجہٴ ادا بدل جاتا ہے تو زبان کا حسب ختم ہو جاتا ہے۔ ضرورت ہے کہ کسی زبان کو سیکھتے وقت اور اس میں تکلم کا کرتے وقت اس بات کا لحاظ رکھا جائے کہ اس کے الفاظ اس شان سے ادا ہوں جس انداز سے اہل زبان ادا کرتے ہیں اور اس میں حتی الامکان وہ لہجہ باقی رکھا جائے جو اہل زبان کا لہجہ ہے اس لئے بغیر تجوید، زبان تو وہی رہے گی لیکن اہل زبان اسے زبان کی بربادی ہی کہیں گے۔

    اردو زبان میں بے شمار الفاظ ہیں جن میں ”ت“ اور ”د“ کی لفظ آتی ہے اور انگریزى زبان میں ایسا کوئی لفظ نہیں ہے۔ انگریزى بولنے والا جب اردو کے ایسے لفظ کو استعمال کرتا ہے تو”تم“ کے بجائے ”ٹم“ اور ”دین“ کے بجاے ”ڈین“ کہتا ہے جو کسی طرح بھی اردو کہے جانے کے لائق نہیں ہے۔

    یہی حال عربی زبان کا بھی ہے کہ اس میں بھی الفاظ و حروف کے علاوہ تلفظ و ادا کو بھی بے حد دخل ہے اور زبان کی لطافت کا زیادہ حصہ اسی ایک بات سے وابستہ ہے اس کے سیکھنے والے کا فرض ہے کہ ان تمام آداب پر نظر رکھے جو اہل زبان نے اپنی زبان کے لئے مقرر کئے ہیں اور ان کے بغیر تکلم اور ان کے بغیر تکلم کرکے وہ دوسرے کی زبان کا ستیاناس نہ کرے۔
    کیا کہنے صاحب کیا کہنے
    استاد سب سے بڑا شاگرد ہوتاہے۔

  5. #5
    Rashid Jaan's Avatar
    Rashid Jaan is offline Advance Member
    Last Online
    16th August 2019 @ 02:30 PM
    Join Date
    18 Oct 2016
    Location
    Ghotki Sindh
    Age
    21
    Gender
    Male
    Posts
    1,437
    Threads
    89
    Credits
    7,497
    Thanked
    79

    Default

    Webhosting in Pakistan
    Nice

Similar Threads

  1. Replies: 11
    Last Post: 13th May 2015, 08:31 PM
  2. Replies: 5
    Last Post: 24th June 2012, 12:51 PM
  3. Replies: 13
    Last Post: 24th December 2009, 07:21 PM

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •