Webhosting in Pakistan
Results 1 to 4 of 4

Thread: امالہ سے کیا مراد ہے

  1. #1
    lost_illlusion is offline Senior Member+
    Last Online
    13th April 2020 @ 11:34 PM
    Join Date
    12 May 2019
    Age
    21
    Gender
    Male
    Posts
    195
    Threads
    43
    Credits
    1,301
    Thanked
    29

    Default امالہ سے کیا مراد ہے

    Webhosting in Pakistan
    امالہ سے کیا مراد ہے۔

    ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺍﺭﺩﻭ ﮔﺮﺍﻣﺮ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﺩﮦ ﺍﺻﻮﻝ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﮨﺮ ﻓﻘﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﺍﺳﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﺫﮨﻦ ﻧﺸﯿﻦ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺭﺩﻭ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﺌﯽ ﻏﻠﻄﯿﺎﮞ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﭻ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺑﯽ ﺑﯽ ﺳﯽ ﺍﺭﺩﻭ ﮐﮯ ﻧﺎﻣﮧ ﻧﮕﺎﺭ ﻇﻔﺮ ﺳﯿﺪ ﮐﯽ ﺗﺤﺮﯾﺮ۔
    ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﺳﺎﺩﮦ ﺳﯽ ﭼﯿﺰ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﮔﮩﺮﺍﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﯽ ﭘﯿﭽﯿﺪﮔﯿﺎﮞ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﺭﺩﻭ ﮐﮯ ﻧﺌﮯ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺧﺎﺻﯽ ﺍﻟﺠﮭﻦ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻥ ﺍﻟﺠﮭﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﺎﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔
    ﺍﻣﺎﻟﮯ ﮐﺎ ﻟﻔﻈﯽ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﮯ ﺟُﮭﮑﻨﺎ۔ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ declension ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻋﻤﻞ ﮐﻮ to decline ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﯾﮧ ﺍﺻﻄﻼﺡ ﺍﺭﺩﻭ ﮔﺮﺍﻣﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﮐﺴﯽ ﻟﻔﻆ ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻟﻒ ﯾﺎ ﺍﻟﻒ ﺳﮯ ﻣﻠﺘﯽ ﺟﻠﺘﯽ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺁﻭﺍﺯ ﮐﻮ ﮮ ﺳﮯ ﺑﺪﻝ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
    ﺍﺱ ﮐﯽ ﭼﻨﺪ ﻣﺜﺎﻟﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﯿﮯ :
    ﻟﮍﮐﺎ : ﻟﮍﮐﮯ ﻧﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎﯾﺎ۔
    ﮔﮭﻮﮌﺍ : ﮔﮭﻮﮌﮮ ﻧﮯ ﺩﻭﮌﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ۔
    ﮐﺘﺎ : ﮐﺘﮯ ﻧﮯ ﭼﮭﻼﻧﮓ ﻟﮕﺎﺋﯽ۔
    ﻣﺪﯾﻨﮧ : ﻣﻮﻻ ﻣﺪﯾﻨﮯ ﺑﻼ ﻟﻮ ﻣﺠﮭﮯ۔
    ﺍﺏ ﺟﺐ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﺍﺻﻮﻝ ﺑﮭﯽ ﺫﮨﻦ ﻧﺸﯿﻦ ﮐﺮ ﻟﯿﺠﯿﮯ۔
    ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎﺕ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﺮ ﻟﻔﻆ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭼﻨﺪ ﺷﺮﺍﺋﻂ ﮨﯿﮟ۔
    .1 ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺻﺮﻑ ﺍﻥ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﻟﻒ ﮨﻮ ، ﯾﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺣﺮﻑ ﮨﻮ ﺟﻮ ﺑﻮﻟﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻒ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻟﮕﮯ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻟﯿﮟ ﮦ ﺍﻭﺭ ﻉ ﮨﯿﮟ ، ﺟﻮ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻒ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔
    .2 ﺑﭽﮧ : ﺑﭽﮯ ﻧﮯ ﮐﮭﻠﻮﻧﺎ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﺎ
    .3 ﺣﻤﻠﮧ : ﺣﻤﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﻮﺙ ﺍﻓﺮﺍﺩ
    .4 ﺻﺪﻣﮧ : ﺻﺪﻣﮯ ﮐﮯ ﺍﺛﺮﺍﺕ
    .5 ﻣﺴﺌﻠﮧ : ﻣﺴﺌﻠﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﻮﮨﺎﺕ
    .6 ﺟﻤﻌﮧ : ﺟﻤﻌﮯ ﮐﺎ ﺑﺎﺑﺮﮐﺖ ﺩﻥ
    .7 ﻣﻮﻗﻊ : ﻣﻮﻗﻌﮯ ﭘﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻟﻮﮒ
    .8 ﺗﻨﺎﺯﻉ : ﺗﻨﺎﺯﻋﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕِ ﺣﺎﻝ
    .9 ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺻﺮﻑ ﻣﺬﮐﺮ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﻣﻮﻧﺚ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ۔ ﻣﺜﻼً ﻟﮍﮐﯽ ﻧﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎﯾﺎ ، ﮔﮭﻮﮌﯼ ﻧﮯ ﺩﻭﮌﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ، ﮐﺘﯿﺎ ﻧﮯ ﭼﮭﻼﻧﮓ ﻟﮕﺎﺋﯽ۔ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺪﻻ ، ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﺁﺧﺮﯼ ﺍﺳﻢ ‏( ﮐﺘﯿﺎ ‏) ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻒ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﺎ۔
    .10 ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺷﮩﺮﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﮕﮩﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻣﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﯽ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ، ﯾﻌﻨﯽ ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﺷﮩﺮ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺍﻟﻒ ﯾﺎ ﺍﺱ ﺳﯽ ﻣﻠﺘﯽ ﺟﻠﺘﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﭘﺮ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔
    .11 ﻣﮑﮧ : ﻣﮑﮯ ﮐﯽ ﺷﺎﻥ
    .12 ﻣﺪﯾﻨﮧ : ﻣﺪﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﺍﻧﻮﺍﺭ
    .13 ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﺎ : ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﭩﮯ
    .14 ﺁﮔﺮﮦ : ﺁﮔﺮﮮ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ
    .15 ﮐﻮﺋﭩﮧ : ﮐﻮﺋﭩﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﺳﻢ
    .16 ﺑﺼﺮﮦ : ﺑﺼﺮﮮ ﮐﯽ ﮐﮭﺠﻮﺭ
    .17 ﮈﮬﺎﮐﮧ : ﮈﮬﺎﮐﮯ ﮐﯽ ﻣﻠﻤﻞ
    ﺟﻦ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ :
    .1 ﺷﮩﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ ﻣﻠﮑﻮﮞ ﯾﺎ ﺑﺮﺍﻋﻈﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻣﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ۔ ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ، ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ، ﺍﻓﺮﯾﻘﮧ ، ﮐﯿﻨﯿﺎ ، ﮐﯿﻨﯿﮉﺍ ، ﺳﺮﯼ ﻟﻨﮑﺎ ، ﺁﺳﭩﺮﯾﻠﯿﺎ ، ﮐﻮﺭﯾﺎ ، ﭼﺎﺋﻨﺎ ، ﺍﺭﺟﻨﭩﯿﻨﺎ ، ﺍﻟﺒﺎﻧﯿﮧ ، ﺑﻮﺳﻨﯿﺎ ، ﭼﯿﭽﻨﯿﺎ ، ﺳﺮﺑﯿﺎ ، ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻣﺬﮐﺮ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻒ ﯾﺎ ﮦ ﺑﮭﯽ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ، ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺍﺭﺩﻭ ﺗﮩﺬﯾﺒﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﺣﺼﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﯿﮟ ، ﺍﻭﺭ ﺍﺭﺩﻭ ﺫﺧﯿﺮۂ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﺍﺑﮭﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﺭﭼﮯ ﺑﺴﮯ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺍﺭﺩﻭ ﺗﮩﺬﯾﺒﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﻣﺸﺮﻕِ ﻭﺳﻄﯽٰ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﺳﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﺬﮨﺒﯽ ﺍﻭﺭ ﺛﻘﺎﻓﺘﯽ ﺭﻭﺍﺑﻂ ﮨﯿﮟ۔
    .2 ﻭﮦ ﺷﮩﺮ ﯾﺎ ﺟﮕﮩﯿﮟ ، ﺟﻦ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺍﺭﺩﻭ ﺗﮩﺬﯾﺒﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ۔ ﺍﺱ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﮐﯿﻠﯿﻔﻮﺭﻧﯿﺎ ، ﮐﯿﺮﻭﻻﺋﻨﺎ ، ﻓﻼﮈﯾﻠﻔﯿﺎ ، ﻣﻨﯿﻼ ، ﺁﭨﻮﻭﺍ ، ب ﺍﻧﻘﺮﮦ ، ﺑﺎﺭﺳﻠﻮﻧﺎ ، ﮐﯿﻨﺒﺮﺍ ، ﺍﯾﮉﻧﺒﺮﺍ ، ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔
    .3 ﻭﮦ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺟﻦ ﮐﯽ ﺟﻤﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻓﺼﯿﺢ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﺍﺑﺎ ، ﺩﺍﺩﺍ ، ﭼﭽﺎ ، ﭘﮭﻮﭘﮭﺎ ، ﺩﯾﻮﺗﺎ ، ﺭﺍﺟﮧ ، ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﯽ ﺟﻤﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻮﻟﯽ ﺟﺎﺗﯽ ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻣﺎﻟﮧ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔

  2. #2
    Rashid Jaan's Avatar
    Rashid Jaan is offline Advance Member
    Last Online
    13th February 2020 @ 07:12 PM
    Join Date
    18 Oct 2016
    Location
    Ghotki Sindh
    Age
    22
    Gender
    Male
    Posts
    1,509
    Threads
    89
    Credits
    8,030
    Thanked
    84

    Default

    بہت خوب

  3. #3
    Alone Men's Avatar
    Alone Men is offline Senior Member+
    Last Online
    30th July 2019 @ 09:07 PM
    Join Date
    28 Jun 2019
    Location
    G-9/2,Islamabad
    Age
    34
    Gender
    Male
    Posts
    228
    Threads
    21
    Credits
    1,266
    Thanked
    25

    Default

    ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
    آمالہ کے بارے بہت مفید معلوماتی آرٹیکل فراہم کیا ہے
    جس کے بدولت کافی آگاہی حاصل ہوئی ہے
    امالہ کے بارے میں ہمارے صحافی ساتھیوں میں اب تک ابہام پایا جاتا ہے کہ اس کا استعمال کہاں اور کیوں کیا جائے۔ اس حوالے سے پہلے بھی کچھ لکھا تھا، لیکن ایسا لگتا ہے کہ بار بار یاد دہانی ضروری ہے۔
    امالہ کا مطلب ہے مائل کرنا۔ عربی کا لفظ ہے۔ الف، ہائے ہوز (ہ) یا الف مقصورہ کو جو الفاظ کے آخر میں آئیں جمع کی حالت میں، یا حرفِ ربط کے ساتھ یائے مجہول سے بدل دینا جیسے بندہ سے بندے، گدھا سے گدھے، کمرہ سے کمرے۔ حرفِ ربط یہ ہیں: سے، میں، تک، پر، نے، کو، کا، کے، کی۔ یاد رہے کہ عربی، فارسی، ترکی کے اصلی الف کسی صورت میں یائے مجہول سے نہیں بدلتے، جیسے دعا، فضا، جزا، پیدا، مرزا، صحرا، آپا (بہن)۔ اس قاعدے سے سودا کا لفظ مستثنا ہے۔ عربی الفاظ کی جمعوں میں امالہ جائز نہیں جیسے طلبہ، اولیا، شرفا، علما وغیرہ۔ عربی فارسی کے اسم فاعل اور اسم مفعول میں بھی کوئی تصرف جائز نہیں، جیسے دانا، بینا، توانا، شنیدہ، مرتضیٰ، مصطفیٰ۔ تاہم اس قاعدے سے مروہ مستثنا ہے
    ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

  4. #4
    Join Date
    16 Aug 2009
    Location
    Makkah , Saudia
    Gender
    Male
    Posts
    21,230
    Threads
    285
    Credits
    95,038
    Thanked
    959

    Default

    Webhosting in Pakistan
    Thanks for Sharing

Similar Threads

  1. Replies: 7
    Last Post: 5th November 2016, 10:47 PM
  2. Replies: 18
    Last Post: 26th January 2016, 11:48 AM
  3. Replies: 1
    Last Post: 16th December 2015, 07:40 PM
  4. Replies: 5
    Last Post: 6th February 2015, 02:01 PM
  5. محبت روگ ہے دل کا اُسے یہ میں نے سمجھایا
    By Shehzad Iqbal in forum Urdu Adab & Shayeri
    Replies: 14
    Last Post: 7th August 2014, 07:44 AM

Tags for this Thread

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •